تمام والدین فوری توجہ دیں

#SA
تمام والدین فوری توجہ دیں
السلام علیکم ورحمتہ اللہ وبرکاتہ۔

پیغام جس طرح موصول ہوا ہے! بالکل اسی طرح شئیر کیا جارہا ہے۔

اہم پیغام! احتیاط سے پڑھنا ضروری ہے!

انتباہ:
ایک ماں نے ناگہانی حادثاتی طور پر اپنے 4 بچوں کو اپنے ہی ہاتھوں سے موت کی نیند سلادیا۔

ماں نے بچوں کی کھانسی کے سبب انہیں کھانسی کا شربت پلانا چاہا لیکن بچے کسی طور راضی نہیں ہوئے اور بچوں نے کھانسی کا شربت پینے سے صاف انکار کر دیا. تو ماں نے ان کی کھانسی سے پریشان ہو کر انہیں بہلاتے ہوئے کھانسی کا شربت دودھ میں ملا کر پلا دیا۔ بچے دودھ پینے کے بعد سو گئے اور پھر کبھی نہیں اٹھ سکے کیونکہ وہ موت کی آغوش میں جاچکے تھے
.
طبی آزمائشیوں کی کڑی جانچ پڑتال کے بعد معلوم ہوا کہ کھانسی کا شربت اور دودھ کا مرکب زہریلا ثابت ہوا. جس کی وجہ سے بچے اپنے بستر پر مردہ پائے گئے۔

ماں ذہنی و نفسیاتی طور پر انتہائی پریشان اور ڈسٹرب ہونے کی وجہ سے اپنے حواس میں نہیں ہے۔ اس کا بار بار یہی کہنا ہے کہ بچے تو یہ شربت نہیں پینا چاہیے رہے تھے میں نے ہی انہیں ان کی کھانسی سے پریشان ہو کر زبردستی شربت پلایا تھا۔ میں نے ہی اپنے بچوں کو نے اپنے ہاتھوں سے مارا.

نہ صرف کھانسی کا شربت بلکہ کسی بھی دوا کو دودھ میں پلا کر کبھی بھی نہ پلائیں کیونکہ وہ ایک خطرناک زہریلا مرکب بن جاتا ہے جو فوری طور پر انسان کو موت کے گھاٹ اتار دیتا ہے.

احتیاط علاج سے بہتر ہے۔

جزاکم اللہ خیراً کثیرا !
دعاگو

تمام رابطوں اور گروپ کے ساتھ اشتراک کریں۔

Attention all parents ⚠
Assalaam Alaikum.
As Received !
Important message! Must Read Carefully!
Warning:
A mother killed her 4 children, accidentally.
The children refused to drink cough syrup. So she mixed the syrup in milk. The children
Went to sleep after drinking the milk and never got up.
After examining the clinical trials, all 4 of them were found dead in the bed, The mixture of cough syrup and milk proved to be poisonous.
The mother said that she killed the children with her own hand.she is
Psychologically disturbed.
Avoid drinking medicine in the milk.
* Not only cough syrup *, * Do not drink any chemical additives in milk *
* It will become poisonous *
Please take care.
Prevention is better than cure
Share with all contact

Be the first to comment on "تمام والدین فوری توجہ دیں"

Leave a comment

Your email address will not be published.


*